Weather (state,county)

Aaj Shab Dil ke Qareen Koi Nahi Hai

:::: آج شب کوئی نہیں ہے ::::

آج شب دل کے قریں کوئی نہیں ہے
آنکھ سے دور طلسمات کے در وا ہیں کئی
خواب در خواب محلّات کے در وا ہیں کئی
اور مکیں کوئی نہیں ہے،
آج شب دل کے قریں کوئی نہیں ہے
"کوئی نغمہ، کوئی خوشبو، کوئی کافر صورت"
کوئی امّید، کوئی آس مسافر صورت
کوئی غم، کوئی کسک، کوئی شک، کوئی یقیں
کوئی نہیں ہے
آج شب دل کے قریں کوئی نہیں ہے
تم اگر ہو، تو مرے پاس ہو یا دُور ہو تم
ہر گھڑی سایہ گرِ خاطرِ رنجور ہو تم
اور نہیں ہو تو کہیں۔۔ کوئی نہیں، کوئی نہیں ہے
آج شب دل کے قریں کوئی نہیں ہے

فیض احمد فیض
..................................
Aaj shab Dil ke Qareen koi nahi hai
Ankh se door talisman ke dar wa hain kaiye
Khwab dar khwab mahlaat ke dar wa hain kaiye
Aur makeen koi nahi hai

Aaj shab Dil ke Qareen koi nahi hai
“koi Naghma, koi khushboo, koi kafir surat”
Koi umeed koi aas musafir surat
Koi gham, koi kasak, koi shak, koi yaqeen
Koi nahi hai

Aaj Shab Dil ke Qareen koi nahi hai
Tum agar ho to mere pass ho ya door ho tum
Har ghari saiya gar khatir-e-ranjor ho tum
Aur nahi ho to kahen, koi nahi , koi nahi hai
Aaj shab Dil ke Qareen koi nahi
 
Powered by Blogger.