Weather (state,county)

Aisa Toota He Tamannaon Ka Pindaar K Bus


 ایسا ٹوٹا ہے تمناؤں کا پندار کہ بس
دل نے جھیلے ہیں محبت میں وہ آزار کہ بس

ایک لمحے میں زمانے میرے ہاتھوں سے گئے
اس قدرتیز ہوئی وقت کی رفتار کہ بس

تو کبھی رکھ کے ہمیں دیکھ تو بازار کے بیچ
اس طرح ٹوٹ کے آئیں گے خریدار کہ بس

کل بھی صدیوں کی مسافت پہ کھڑے تھے دونوں
درمیان آج بھی پڑتی ہے وہ دیوار کہ بس

یہ تو اک ضد ہے کہ محسن میں شکایت نہ کروں
ورنہ شکوے تو ہیں اتنے میرے یار کہ بس....!!
Aisa toota he tamannaon ka pindaar k bus.
Dil nen Jhaily hen Muhabbat men wo azaar k bus

Aik lamhy men zamany mere hathon se gaye.
Is qadar taiz hui waqt ki raftaar kay bus

Tu kabhi rakh k hmen dekh to bazar k beech.
is tarha toot k ayen gy Khareedar k bus

Kal bhi sadion ki musafat py khary thy dono
Darmian aaj bhi parti he wo deewar k bus

Ye to ik Zid he Mohsin k men shikayat na krun
Warna shikwy to itny hen mere yaar k Bus
Powered by Blogger.