Weather (state,county)

Gaye Dinon Ka Suragh Le Kar Kidhar Se Aaya Kidhar Gaya Wo


گئے دنوں کا سراغ لیکر کدھر سے آیا کدھر گیا وہ
عجیب مانوس اجنبی تھا مجھے تو حیران کر گیا وہ

خوشی کی رت ہو کہ غم کا موسم، نظر اسے ڈھونڈتی ہے ہر دم
وہ بوئے گل تھا کہ نغمہ جان، میرے تو دل میں اتر گیا وہ

وہ میکدے کو جگانے والا، وہ رات کی نیند اڑانے والا
نہ جانے کیا اس کے جی میں آئی کہ شام ہوتے ہیں گھر گیا وہ

کچھ اب سنبھلنے لگی ہے جاں بھی، بدل چلا رنگ آسماں بھی
جو رات بھاری تھی ڈھل گئی ہے، جو دن کڑا تھا گزر گیا وہ

شکستہ پا راہ میں کھڑا ہوں، گئے دنوں کو بلا رہا ہوں
جو قافلہ میرا ہمسفر تھا، مثل گرد سفر گیا وہ

بس اک منزل ہے بوالہوس کی، ہزار رستے ہیں اہل دل کے
یہی تو ہے فرق مجھ میں اس میں، گزر کیا میں ٹھہر گیا وہ

وہ جس کے شانے پہ ہاتھ رکھ کر سفر کیا تونے منزلوں کا
تیری گلی سے نہ جانے کیوں آج سر جھکائے گزر گیا وہ

وہ ہجر کی رات کا ستارا، وہ ہمنفس ہمسخن ہمارا
سدا رہے اس کا نام پیارا، سنا ہے کل رات مر گیا وہ

بس ایک موتی سی چھب دیکھا کر، بس ایک میٹھی سی دھن سنا کر
ستارا شام بن کے آیا، برنگ خواب سحر گیا وہ

نہ اب وہ یادوں کا چڑھتا دریا، نہ فرصتوں کی اداس برکھا
یونہی ذرا سی کسک ہے دل میں، جو زخم گہرا تھا بھر گیا وہ

وہ رات کا بے نوا مسافر، وہ تیرا شاعر وہ تیرا ناصر
تیری گلی تک تو ہم نے دیکھا، پھر نہ جانے کدھر گیا وہ
gaye dinon ka surag lekar kidhar se aaya kidhar gaya wo
ajeeb manus ajanabi tha mujhe to hairan kar gaya wo

khushi ki rut ho ki gham ka mausum nazar use dhundhati hai har dam
wo bu-e-gul tha ki nagma-e-jan mere to dil mein utar gaya wo
wo maikade ko jaganevala wo raat ki neend udanevala
na jane kya us ki jee mein aayi ki sham hote hi ghar gaya wo
kuch ab sambhalane lagi hai jan bhi badal chala rang aasman bhi
jo raat bhari thi tal gai hai jo din kada tha guzar gaya wo
shikastapa rah mein khada hun gaye dinon ko bula raha hun
jo qafila mera hamsafar tha misl-e-gard-e-safar gaya wo
bas ek manzil hai bulhavas ki hazar raste hain ahal-e-dil ki
ye hi to hai farq mujh mein us mein guzar gaya main thahar gaya wo
wo jis ki shane pe hath rakh kar safar kiya tune mannzilon ka
teri gali se na jane q aj sar jhukaye guzar gaya wo
wo hijr ki raat ka sitara wo hamnafas hamsukhan hamara
sada rahe us ka naam pyara suna hai kal raat mar gaya wo
bas ek moti si chab dikhakar bas ek mithi si dhun suna kar
sitara-e-sham ban ki aaya barang-e-khayal-e-sahar gaya wo
na ab wo yadon ka chadhata dariya na fursaton ki udas barkha
yun hi zara si kasak hai dil mein jo zakhm gahara tha bhar gaya wo
wo raat ka benava musafir wo tera shayar wo tera ‘nasir’
teri gali tak to hum ne dekha phir na jane kidhar gaya wo
Powered by Blogger.