Weather (state,county)

Hazaron Dukh Paren Sehna Muhabbat Mar Nahin Sakti


ہزاروں دکھ پڑیں سہنا محبت مر نہیں سکتی
ہے تم سے بس یہی کہنا محبت مر نہیں سکتی

ترا ہر بار مرے خط کو پڑھنا اور رو دینا
مرا ہر بار لکھ دینا ، محبت مر نہیں سکتی

کیا تھا ہم نے کیمپس کی ندی پر اک حسیں وعدہ
بھلے ہم کو پڑے مرنا ، محبت مر نہیں سکتی

جہاں میں جب تلک پنچھی چہکتے اڑتے پھرتے ہیں
ہے جب تک پھول کا کھلنا ، محبت مر نہیں سکتی

پرانے عہد کو جب زندہ کرنے کا خیال آیا
مجھے بس اتنا لکھ دینا ، محبت مر نہیں سکتی

وہ تیرا ہجر کی شب فون رکھنے سے ذرا پہلے
بہت روتے ہوئے کہنا ، محبت مر نہیں سکتی

اگر ہم حسرتوں کی قبر میں ہی دفن ہوجائیں
تو یہ کتبوں پہ لکھ دینا ، محبت مر نہیں سکتی

پرانے رابطوں کو پھر نئے وعدے کی خواہش ہے
ذرا اک بار تو کہنا ، محبت مر نہیں سکتی

گئے لمحات فرصت کے کہاں سے ڈھونڈ کر لاؤں
وہ پہروں ہاتھ پر لکھنا،محبت مر نہیں سکتی

وصی شاہ

Hazaron Dukh Paren Sehna Mohabbat Mar Nahi Sakti
Hai Tum Se Bas Yahi Kehna Mohabbat Mar Nahi Sakti

Tera Har Baar Mere Khat Ko Parhna Aur Ro Dena
Mera Har Baar Likh Dena Mohabbat Mar Nahi Sakti

Kiya Tha Hum Ne Campus Ki Nadi Par Ik Haseen Wada
Bhale Hum Ko Pare Marna Mohabbat Mar Nahi Sakti

Jahan Mai Jab Talak Panchi Chehekte Urte Phirte Hain
Hai Jab Tak Phool Ka Khilna Mohabbat Mar Nahi Sakti

Puraane Aihd Ko Jab Zinda Karne Ka Khayal Aaye
Mujhe Bas Itna Likh Dena Mohabbat Mar Nahi Sakti

Wo Tera Hijr Ki Shab Phone Rakhne Se Zara Pehle
Bohot Rote Hue Kehna Mohabbat Mar Nahi Sakti

Agar Hum Hasraton Ki Qabr Mai Hi Dafan Ho Jayen
To Yeh Katbon Pe Likh Dena Mohabbat Mar Nahi Sakti

Puraane Raabton Ko Phir Naye Waadey Ki Khuwahish Hai
Zara Ek Baar To Kehna Mohabbat Mar Nahi Sakti

Gaye Lamhaat Fursat Ke Kahan Se Dhondh Kar Laaon
Wo Pehron Haath Par Likhna Mohabbat Mar Nahi Sakti

(Wasi Shah)
Powered by Blogger.