Weather (state,county)

Is Dil Ne Teray Baad Muhabbat Bhi Nahi’n Ki


اس دل  نے تیرے بعد محبت بھی نہیں کی
حد یہ کہ دھڑکنے کی جسارت بھی نہیں کی
تعبیر کا اعزاز ہوا ہے اسے حاصل
جس نے میرے خوابوں میں شراکت بھی نہیں کی
الفت تو بڑی بات ہے ہم سے تو سرِشہر
لوگوں نے کبھی ڈھنگ سے نفرت بھی نہیں کی
آدابِ سفر اب وہ سکھاتے ہیں جنہوں نے
دو چار قدم تھے یہ مسافت بھی نہیں کی
کیا اپنی صفائی میں بیاں دیتے کہ ہم نے
ناکردہ گناہوں کی وضاحت بھی نہیں کی
خاموش تماشائی کی مانند سرِ بزم
سو زخم سہہ لیے دل پہ شکایت بھی نہیں کی
اس گھر کے سبھی لوگ مجھے چھوڑنے آئے
دہلیز تلک اس نے یہ زحمت بھی نہیں کی
اس نے بھی غلاموں کی صفوں میں ہمیں رکھا
اس دل پہ کبھی جس نے حکومت بھی نہیں کی 

Is dil ne teray baad muhabbat bhi nahi’n ki
Had ye k dharakney ki jasaarat bhi nahi’n ki
Tabeer ka aizaz hua hai usey haasil
Jis ne mery khuwabo’n mein sharakat bhi nahi’n ki
Ulfat tou barri baat hai hum se to sar-e-sheher
Logo’n ne kabhi dhang se nafrat bhi nahi’n ki
Aadab-e-safar ab wo sikhatay hain jinho’n ne
Do chaar qadam thay, ye musaafat bhi nahi’n ki
Kia apni safai mein bayaa’n daity k hum ne
Nakarda gunaho’n ki wazahat bhi nahi’n ki
Khamosh tamashaai k manind sar-e-bazm
So zakhm sahay dil pe, shikayat bhi nahi’n ki
Us ghar k sabhi log mujhy chorrney aaye
Dehleez talak us ne ye zehmat bhi nahi’n ki
Us ne bhi ghulam’on ki safo’n mein humain rakha
Is dil pe kabhi jis ne hakoomat bhi nahi’n ki. . !
Powered by Blogger.