Weather (state,county)

Is Dil Ne Tere Bad Muhabbat Bhi Nahin Ki


اِس دل نے ترے بعد محبت بھی نہیں کی
حد یہ کہ دھڑکنے کی جسارت بھی نہیں کی

تعبیر کا اعزاز ہُوا ہے اُسے حاصل
جس نے مرے خوابوں میں شراکت بھی نہیں کی

اُلفت تو بڑی بات ہے ہم سے تو سرِ شہر
لوگوں نے کبھی دھنگ سے نفرت بھی نہیں کی

آدابِ سفر اب وہ سِکھاتے ہیں جنہوں نے
دو چار قدم طے یہ مسافت بھی نہیں کی

کیا اپنی صفائی میں بیاں دیتے کہ ہم نے
ناکردہ گناہوں کی وضاحت بھی نہیں کی

اُس گھر کے سبھی لوگ مجھے چھوڑنے آئے
دہلیز تلک اُس نے یہ زحمت بھی نہیں کی

اُس نے بھی غلاموں کی صفوں میں ہمیں رکھا
اِس دل پہ کبھی جس نے حکومت بھی نہیں کی
خاموش تماشائی کی مانند سرِ بزم
 سو زخم سہے دل پہ شکایت بھی نہیں کی
Iss Dil Ne Tere Baad Mohabbat Bhi Nahi Ki
Had yeh ke Dharakne Ki Jisaarat Bhi Nahi Ki

Tabeer Ka Aeizaaz Hua Hai Ussey Hasil
Jisne Mere Khuaboo'b Mein Shiraakat Bhi Nahi Ki

Ulfat To Bari Baat Hai Humse To Sar-e-Shehar
Logoo'n Ne Kabhi Dhang se Nafrat Bhi Nahi Ki

Aadaab-e-Safar Ab Wo Sikhaate Hain Jinhoo'n Ne
Do Chaar Qadam Tay, Yeh Musaafat Bhi Nahi Ki

Kya Apni Safaayi Mein Bayaan Dete Ke Humne
Na Karda Gunaahi ki Wazaahat Bhi Nahi Ki
Uss Ghar Ke Sabhi Log Mujhey Chorney Aaye
Dehleez Talak Uss Ne Yeh Zehmat Bhi Nahi Ki
Ussne Bhi Ghulamoo Ki Safoo'n Mein Humein Rakha
Iss Dil Pe Kabhi Jis Ne Hakoomat Bhi Nahi Ki 

Khaamosh Tamashaayi Ki Maanind Sar-e-Bazm
So Zakham Sahey Dil Pe , Shikaayet Bhi Nahi ki
Powered by Blogger.