Weather (state,county)

Kal Chaudhvin Ki Raat Thi Abaad Tha Kamra Tera


ابنِ انشاء کی غزل "کل چودھویں کی رات تھی،شب بھر رہا چرچا ترا" سے متاثر ہو کر لکھی گئی غزل۔۔۔۔۔امید ہے آپکو پسند آئے گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔


کل چودھویں کی رات تھی آباد تھا کمرہ ترا
ہوتی رہی دھک دھک دھنا، بجتا رہا طبلہ ترا

شوہر، شناسا، آشنا، ہمسایہ، عاشق، نامہ بر
حاضر تھا تیری بزم میں ہر چاہنے والا ترا

عاشق ہیں جتنے دیدہ ور، تو سب کا منظورِ نظر
نتھا ترا، فجّا ترا، ایرا ترا، غیرا ترا

اک شخص آیا بزم میں، جیسے سپاہی رزم میں
کچھ نے کہا یہ باپ ہے، کچھ نے کہا بیٹا ترا

میں بھی تھا حاضر بزم میں، جب تو نے دیکھا ہی نہیں
میں بھی اٹھا کر چل دیا بالکل نیا جوتا ترا

یہ مال اک ڈاکے میں کل دونوں نے مل کرلوٹا ہے
انصاف اب کہتا ہے یہ، آدھا مرا، آدھا ترا


Kal chaudhvin ki raat thee abaad tha kamra tera
Hoti rahi dhan tak dhina bajtaa rahaa tabla tera

Shauhar shanasa aashna hamsaaya ashiq naama bar
Hazir tha teri bazm mai har chahne wala tera

Ashiq hain jitne deeda dar too sab ka manzoore nazar
Naha tera, Fajja tera, Airaa teraa Gheraa tera

Ik shakhs aaya bazm mai jaise siyahi rizm mai
Kuchh ne kaha yeh baap hai kuchh ne kaha beta tera

Mai bhi tha hazir bazm mai jab tooney dekha hi nahee
Mai bhi utha ker chal diya bilkul naya joota tera

Yeh maal ik daake mai kal dono ne milker loota hai
Insaaf ab yeh kehta hai aadha mera adha tera
Powered by Blogger.