Weather (state,county)

Rudad-e-Muhabbat Kya Kahiye Kuch Yaad Rahi Kuch Bhool Gaye


رُودادِ محبّت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کچھ بھول گئے
دو دِن کی مُسرّت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے

جب جام دیا تھا ساقی نے جب دور چلا تھا محفل میں
اِک ہوش کی ساعت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گیے

اب وقت کے نازک ہونٹوں پر مجروح ترنّم رقصاں ہے
بیدادِ مشیّت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بُھول گئے

احساس کے میخانے میں کہاں اَب فکر و نظر کی قندیلیں
آلام کی شِدّت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے

کُچھ حال کے اندھے ساتھی تھے کُچھ ماضی کے عیّار سجن
احباب کی چاہت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے

کانٹوں سے بھرا ہے دامنِ دِل شبنم سے سُلگتی ہیں پلکیں
پُھولوں کی سخاوت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے

اب اپنی حقیقت بھی ساغر بے ربط کہانی لگتی ہے
دُنیا کی کی حقیقت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے

ساغر صدّیقی
Rudad-e-muhabbat kya kahiye kuch yaad rahi kuch bhool gaye
do din ke masarrat kya kahiye kuch yaad rahi kuch bhool gaye
jab jam diya tha saqi ne jab daur chala tha mahafil mein
wo hosh ke sa’at kya kahiye kuch yaad rahi kuch bhool gaye
ab waqt ke nazuk honton per majrooh tarranum raqsan hai
bedad e mshiyat kia kahiye kuch yad rahi kuch bhool gaye
ehasas ke maikhane mein kahan ab fikr-o-nazar ke qandilen
aalam ke shiddat kya kahiye kuch yaad rahi kuch bhool gaye
kuch haal k andhe sathi the kuch mazi ke ayyar sajan
ahbab ki chahat kia kahiye kuch yaad rahi kuch bhool gaye

Kanton se bhara hai daman e dil shabnam se sulagti hain palkein
phoolon ki sakhawat kia kahiye kuch yaad rahi kuch bhool gaye
ab apni haqiqat bhi “sagar” berabt kahani lagti hai
duniya ke haqiqat kya kahiye kuch yaad rahi kuch bhool gaye
Powered by Blogger.