Weather (state,county)

SAWAL YE TO NAI K LAKRI JAL RAHI HAY KOI

                                            غزل
سوال یہ تو نہیں لکڑی جل رہی ہے کوئی
سوال یہ ہے کہ کیا گیلی جل رہی ہے کوئی


میرا کلام کئی مرحلوں میں جلتا ہے
ابھی تو بات وُہی پہلی جل رہی ہے کوئی


میں جل رہا ہوں مگر اس قدر سُکون سے کیوں
بدی کے ساتھ میری نیکی جل رہی ہے کوئی


یہ موجِ عشق لپٹ کر جلا رہی ہے مُجھے
کہ راہ میں پڑی پگڈنڈی جل رہی ہے کوئی


مہک رہی ہے کوئی یاد گُفتگو کی طرح
سُلگ سُلگ کے “اگر بتی ” جل رہی ہے کوئی


تو کیا میں ہاتھ سے بھی سُورۂ جمیل پڑھوں
مری نگاہ میں کیا دھیمی جل رہی ہے کوئی


پتہ چلا ہے کہ تُم خوش نہیں تعلق میں
تُمھاری اُنگلی میں انگوٹھی جل رہی ہے کوئی


شاعر:   رفیع رضا
Powered by Blogger.