Weather (state,county)

Chahat Bhari Kitaab Se Aagay Nikal Gaya


چاہت بھری کتاب سے آگے نکل گیا
وہ شخص اِنتساب سے آگے نکل گیا

اُڑتے ہوئے بگولوں سے اُس کا پتہ نہ پوچھ
لگتا ہے وہ سراب سے آگے نکل گیا

سب واپسی کے راستے مسدود ہوگئے
وہ آج اِس حساب سے آگے نکل گیا

اِتنا سکوت, دھڑکنیں تھم تو نہیں گئیں؟
دل آج اِضطراب سے آگے نکل گیا

آنکھیں کھلیں تو سامنے تعبیر تھی کھڑی
وہ آج اپنے خواب سے آگے نکل گیا

آگے نئے عذاب کے آثار مل گئے
جب عشق , اِک عذاب سے آگے نکل گیا

گُم وَصل کی کتاب میں ایسا ہوا بتول
...وہ فُرقتوں کے باب سے آگے نکل گیا

Chahat Bhari Kitaab Se Aagay Nikal Gaya
Woh Shakhs Intasaab Se Aagay Nikal Gaya

Urrtay Huey Bagolon Se Uska Pata Na Pooch
Lagta Hai Woh Saraab Se Aagay Nikal Gaya

Sab Wapsi K Rastay Masdood Ho Gaey
Woh Aaj Is Hisaab Se Aagay Nikal Gaya

Itna Sakoot, Dharkane Tham Tou Nahi Gaie
Dil Aaj Iztaraab  Se Aagay Nikal Gaya

Aankhein Khuli Tou Samne Tabeer Thi Kharri
Woh Aaj Apne Khuwaab Se Aagay Nikal Gaya

Aagay Naey Azaab K Aasaar Mil Gaey
Jab Ishq, Ik Azaab Se Aagay Nikal Gaya

Ghum Vasl Ki Kitaab Mein Aisa Hua Batool
Woh Furqaton K Baab Se Aagay Nikal Gaya...
Powered by Blogger.