Weather (state,county)

Zakhm Hijraan Ka Bhar Gaya Kuch Kuch


زخم ہجراں کا بھر گیا کچھ کچھ
زہر ِغم کام کر گیا کچھ کچھ

عشق کے آخری مراحل میں
سچ کہوں میں بھی ڈر گیا کچھ کچھ

آج دشمن کی موت کا سن کر
یوں لگا میں بھی مر گیا کچھ کچھ

بے سبب محتسب نہیں خاموش
مال اس کے بھی گھر گیا کچھ کچھ

اب تیرا دکھ نہیں رہا اتنا
جی محبّت سے بھر گیا کچھ کچھ


Zakhm Hijraan Ka Bhar Gaya Kuch Kuch
Zehr-e-Gham Kaam Kar  Gaya Kuch Kuch

Ishq K Aakhri Marahil Mein
Such Kahoon Mein Bhi Dar Gaya Kuch Kuch

Aaj Dushman Ki Mout Ka Sun Kar
Yun Laga Mein Bhi Mar Gaya Kuch Kuch

Be-Sabab Mohtasib Nahi Khamosh
Maal Us K Bhi Ghar Gaya Kuch Kuch

Ab Tera Dukh , Nahi Raha Itna
G Mohabbat Se Bhar Gaya Kuch Kuch...
Powered by Blogger.